مستونگ دھماکے کی تحقیقات میں اہم پیشرفت، پانچ دہشتگرد گرفتار

کوئٹہ: (دنیا نیوز) ذرائع کے مطابق گرفتار دہشتگرد مستونگ اور شاہ نورانی خود کش حملوں میں ملوث ہیں، ان میں مطلوب ترین دہشتگرد بھی شامل ہیں۔

ذرائع کے مطابق دہشتگردوں نےافغانستان میں موجود ساتھی کا نام بھی بتا دیا ہے، فاروق بنگلزئی نامی یہ دہشتگرد خود کش بمبار فراہم کرتا ہے۔ گرفتار دہشتگرد ہلاک دہشتگرد ہدایت اللہ کے قریبی ساتھی ہیں، ماسٹر مائنڈ ہدایت اللہ حساس ادارے سے مقابلے میں مارا جا چکا ہے۔ گرفتار دہشتگرد مغویوں کو سرنگوں میں قید رکھتے تھے۔

یاد رہے کہ رواں سال 13 جولائی کو بلوچستان کے ضلع مستونگ میں ہونے والے خود کش حملے میں بلوچستان عوامی پارٹی کے رہنما نوابزادہ سراج رئیسانی سمیت کم از کم 149 افراد شہید اور 186 زخمی ہو گئے تھے۔ پولیس اور حساس اداروں نے تحقیق میں سراغ لگایا تھا کہ خود کش حملہ کرنے والے بمبار کا تعلق سندھ کے علاقے میرپور ساکرو سے تھا۔

خود کش بمبار کے خاندان کے تعلق ایبٹ آباد سے تھا لیکن گزشتہ چار دہائیوں سے وہ سندھ کے ضلع ٹھٹہ میں رہائش پذیر ہے۔

اس سے قبل 2016ء میں ضلع خضدار میں دربار شاہ نورانی میں ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں پچاس سے زائد زائرین اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

گذشتہ شمارے