عراق میں یزیدیوں کا مستقبل کیا ہوگا؟

 

موصل سے نام نہاد تنظیم دولتِ اسلامیہ کی پسپائی کے بعد نامہ نگار پال موس نے یزیدی قبیلے کی مشکلات کا جائزہ لینے کی کوشش کی ہے جو اقوامِ متحدہ کے مطابق دولتِ اسلامیہ کے ہاتھوں سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے۔

یزیدی عورتوں میں سے پہلی نے رونا شروع کر دیا ، پھر اس کی سہیلی نے بھی پھر وہاں آنے والی ایک خاتون کی سسکیاں بھی سنائی دینے لگیں۔

ہم یزیدی قبیلے کے لوگوں کی کہانیاں سن رہے تھے جو سنجار کے علاقے میں سنہ 2014 میں دولتِ اسلامیہ کے مظالم کا نشانہ بنے۔ اس دوران ہزاروں افراد کو قتل کیا گیا جبکہ ہزاروں مجبوراً جلا وطنی پر مجبور ہوئے۔

ایک عورت کا کہنا تھا ‘ہمارے کچھ ہمسائے پہاڑوں کی طرف بھاگے لیکن ان کے وہاں پہنچنے سے پہلے ہی دولتِ اسلامیہ کے گروہوں نے انہیں جا لیا۔’

‘مردوں کو ہلاک کر دیا گیا اور عورتوں اور بچوں کو وہ ساتھ لے گئے۔’

‘ بہت لوگ مارے گئے’

ان میں سے کوئی بھی خاتون اپنا نام ظاہر نہیں کرنا چاہتی تھی۔

دو سال پہلے کے تجربے نے انہیں دوسرے لوگوں اور مستقبل کے بارے میں گہرے خوف میں مبتلا کر رکھا تھا۔

ایک عورت کا کہنا تھا ‘وہ شاید دولتِ اسلامیہ کو تو علاقے سے نکالنے میں کامیاب ہو جائیں لیکن ہمارے لیے اب اپنے علاقوں میں لوٹنا آسان نہیں ہوگا۔ کیونکہ ہمیں ڈر ہے کہ پھر سے کچھ ایسا نہ ہو۔’

‘وہ شاید واپس آجائیں گے۔’

دولتِ اسلامیہ کی پسپائی کے بعد کئی عراقیوں کے ذہن میں اپنے علاقوں میں واپسی کا خیال موجود ہے۔ گو کہ یزیدی بھی واپسی کے لیے اتنے زیادہ خوفزدہ نہیں لیکن ان کے لیے بھی یہ کافی مشکل ہوگا کیونکہ سنجار اور اس کے ارد گرد کے دیہات کو باقاعدگی سے نشانہ بنایا گیا۔

عراق میں تعمیرات اور رہائش کے ذمہ دار وزیر دارا یرا کا کہنا تھا ‘یہاں گھر سڑکیں ، پل سب تباہ کر دیا گیا ہے۔’

ان کا کہنا تھا کہ یہاں تعمیر نو کا کام شروع کرنے کے لیے بھی وقت لگے گا۔

‘اس طرح ی صورتحال کے بعد امن، استحکام کی ضرورت ہوتی ہے۔ اور یہ ایک طویل عمل ہے۔’

اس وقت یہ یزیدی لوگ خیمہ بستوں میں مقیم ہیں جہاں شاید انہیں ایک اور موسم سرما گزارنا پڑے۔

ان میں سے کئی تو واپس جانا ہی نہیں چاہتے اور انھوں نے یورپ اور شمالی امریکہ میں پناہ کی درخواست دے دی ہے۔

یزیدیوں کے مقدس مقامات کی سیر کروانے والے استاد لقمان سلیمان کا کہنا تھا ‘یہ لوگ اب جرمنی، فرانس یا آسٹریلیا جانا چاہتے ہیں۔ یہاں کردستان میں ان یزیدیوں کا مستقبل نہیں ہے۔’

 

Share this on...Share on FacebookEmail this to someonePrint this page

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

گذشتہ شمارے